Category - کیا آپ جانتے ہیں

1
پاکستان خلاءمیں پہنچ گیا
2
ساڑھےتئیس انچ کےفلپائن ی شہری نےگینیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں نام درج کرالیا
3
چینیوں نے زیر پانی دنیا کی تیز ترین ریل گاڑی کی سرنگ مکمل کر لی
4
…بڑ ے ہمارے بھوکے بھوت تھے اور ہم
5
شمسی توانائی سے چلنے والی دنیا کی سب سے بڑی کشتی امریکہ پہنچ گئی
6
چینی موجد نے شمسی توانائی سے چلنے والی گاڑیاں تیار کرلی
7
کائنات کا آخری سرا دریافت
8
زندگی موجود ہے ،20نوری سال دور نئی دنیا مل گئی
9
سورج 2013ءقیا مت لا ئے گا
10
چیتےکی رفتاراور ببرشیرکی نیند،حشرات کاوزن انسانوں سے بارہ گنا زیادہ

پاکستان خلاءمیں پہنچ گیا

پاکستان کااپنا پہلا مواصلاتی سیارہ پاک سیٹ ون آر خلاءمیں کامیابی کے ساتھ مدار تک پہنچ گیا ہے۔’پاک سیٹ ون آر‘پندرہ برس تک خلا میں رہے گا۔پاکستان نے یہ سیارہ چین کے تعاون سے خلاءمیں بھیجا ہے جو پاکستان کے خلائی پروگرام 2040ءکا حصہ ہے۔پاک سیٹ ون آر کو پاکستانی وقت کے مطابق رات نو بجکر سترہ منٹ پر چین سے خلا ءمیں بھیجا گیا۔اس موقع پرسیکرٹری دفاع سیداطہرعلی،سیکرٹری خارجہ سلمان بشیر،لیفٹیننٹ جنرل خالد احمد قدوائی اور چین میں پاکستان کے سفیر مسعود خان بھی موجود تھے۔

ساڑھےتئیس انچ کےفلپائن ی شہری نےگینیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں نام درج کرالیا

لاس اینجلس ساڑھے تئیس انچ کے فلپائنی شہری کو دنیا کا سب سے چھوٹے قد کا آدمی قرار دیاگیا ہے۔18 برس کےجُنرے کانام گنیز بک آف ورلڈریکارڈ میں سب سےچھوٹے قد کے آدمی کے طور پر درج کرلیاگیا ہے۔گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں شامل ہونے کےلئے امیدوار کی عمر کم ازکم اٹھارہ سال ہونا ضروری ہے۔جوں ہی جُنرے اٹھارہ برس کا ہوا اُس کانام ورلڈریکارڈمیں شامل کرلیاگیا۔ اس سےقبل دنیا کے پستہ قد آدمی کا ٹائیٹل نیپال کے تھاما میگر کے نام تھا جس کا قدٔچھبیس انچ تھا

چینیوں نے زیر پانی دنیا کی تیز ترین ریل گاڑی کی سرنگ مکمل کر لی

چین نے اعلان کیاہے کہ اس نے دنیا کی تیز ترین ریل گاڑی کے لیے پانی کے اندر سرنگ مکمل کرلی ہے۔ایک یورپی ویب سائٹ کے مطابق 6.7 میل لمبا شیزیانگ ٹنل جنوبی چین کے صوبے گوانڈونگ میں پرل دریا کی 200 فٹ گہرائی میں واقع ہے جو 220 میل فی گھنٹہ ریل گاڑیوں کی رفتار کے لیے بنایاگیاہے۔پروجیکٹ مینیجر نے کہا کہ تعمیر کا کام نومبر 2007 ءمیں شروع ہوا اوراگلے سال ریل گاڑی چلائے جانے کاکام مکمل ہوجائے گا۔اس سرنگ کے باعث گوانگزہو اور ہانگ کانگ کے درمیان سفر آٹھ گھنٹے تک کم ہوجائے گا۔

…بڑ ے ہمارے بھوکے بھوت تھے اور ہم

ملائشیا میں چینی نسل کے افراد نے بھوکے بھوتوں کا تہوارمنا یا۔ چینی نسل کے افراد میں اگست خاص اہمیت رکھتا ہے ۔ وہ اسے بزرگوں کی یادگار کے طور پر مناتے ہیں۔ چینی باشندوں کا ماننا ہے کہ اگست میں جہنم کا دروازہ کھلنے بھوت زمین پر آ جاتے ہیں جس کی وجہ سے بیماریاں اور پریشانیاں پیدا ہوتی ہیں۔ وہ بھوتوں کو لذیذ کھانوںمیں پھل اور بہترین مشروبات پیش کرتے ہیںتاکہ بھوت انسانوں کو پریشان نہ کریں۔ رواں سال فیسٹول کیلئے کوالا لمپور کے مضافات میں بھوتوں کے دیوتا کا 36 فٹ اونچا پتلا بنایا گیا تھا جسے تحفے پیش کیے گئے۔ روایت کے مطابق پتلے کو فیسٹول کے اختتام پر جلا دیا جا تا ہے ۔

شمسی توانائی سے چلنے والی دنیا کی سب سے بڑی کشتی امریکہ پہنچ گئی

نیویارک :شمسی توانائی سے چلنے والی دنیا کی سب سے بڑی کشتی 61دن کے سفر کے بعد امریکی ریاست میامی پہنچ گئی ہے ۔کشتی 31میٹر لمبی اور 15میٹر چوڑی ہے ۔کشتی کے کپتان کے مطابق بحیرہ اوقیانوس میں سفر کے دوران کوئی مشکل پیش نہیں آئی ۔ کپتان کا دعویٰ ہے کہ یہ پہلی کشتی ہے جس میں توانائی حاصل کرنے کا واحد ذریعہ سورج کی روشنی ہے ۔یہ توانائی بیٹریوں میں جمع کرکے برقی توانائی پیدا کی جاتی ہے ۔کپتان نے بتایا کہ کشتی چند روز میامی میں قیام کے بعد میکسیکو روانہ ہوجائے گی ۔

چینی موجد نے شمسی توانائی سے چلنے والی گاڑیاں تیار کرلی

بیجنگ سی ایم ڈی چین کے صوبے جیا نگ ثو کے شہر سے تعلق رکھنے والے غیر پیشہ ور موجدنے گھر بیٹھے دو شمسی توانائی سے چلنے والی گاڑیاں تیار کرلی ہیں۔چینی میٹر کے مطا بق آٹھ سالوں کی کڑی محنت سے تیار ہونے والی ان گاڑیوں پر شمسی پینل نصب ہیں جن سے حاصل ہونے والی توانائی سے یہ گاڑیاں اپنی ایندھن کی ضرورت پوری کرتی ہیں۔تقریباً75ہزار ڈالر کی مجموعی لاگت سے تیار ہونے والی ان گاڑیوں میں سے ایک45کلومیٹر فی گھنٹہ اور دوسری60کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

کائنات کا آخری سرا دریافت

برطانوی سائنس دانوں نے کائنات کا آخری سرا دریافت کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ برطانیہ کی یونیورسٹی آف برسٹل کے خلائی سائنس دان میری کولم بریلم نے دعویٰ کیا ہے کہ اُن کی ریسرچ ٹیم نے کائنات کا آخری سرا دریافت کر لیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ کائنات کے آخری سرے پر موجود کہکشاں ہمارے نظام شمسی سے لگ بھگ 13.1 ارب نوری سال کے فاصلے پر ہے۔ سائنس دانوں کا دعویٰ ہے کہ کہکشاں کی روشنی کو زمین تک پہنچنے میں اتنی مدت لگتی ہے جتنی کسی ستارے کے بننے کیلئے درکار ہوتی ہے جو کم وبیش دس لاکھ نوری سال سے زائد ہے۔

زندگی موجود ہے ،20نوری سال دور نئی دنیا مل گئی

خلائی سائنس کے ماہرین نے زمین سے بیس نوری سال کے فاصلے پر جو نئی دنیا دریافت کی ہے اس میں زندگی موجود ہے۔وہاں ہماری زمین جیسا ماحول اور کشش ثقل پائی جاتی ہے۔ یہ بات سو فیصد یقینی ہے کہ وہاں پانی بھی ہو گا۔ نوری سال وہ فاصلہ ہے جو روشنی ایک سال میں طے کرتی ہے روشنی کی رفتار کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ یہ ایک سکینڈ میں زمین کے ساتھ چکر پورے کرتی ہے۔ جمعرات کی شب سائنسدانوں نے نئی دریافت کا اعلان کرکے بتایا نئی دنیا ہماری زمین سے تین گنا بڑی ہے۔ یہ دنیا گولڈی لاک ستارے کی حدود میں ہے جہاں موسم زیادہ گرم ہے نہ سرد اور وہاں پانی سمندروں ، جھیلوں اور دریاﺅں کی شکل میں موجود ہو گا۔ سائنسدانوں کا کہنا ہے کائنات ہماری زمین جیسی دنیاﺅں سے بھری پڑی ہے۔

سورج 2013ءقیا مت لا ئے گا

sunنیویارک (میراپتوکی ڈاٹ کام)ناسا نے پیش گوئی کی ہے کہ 2013 ءمیں سورج سے اٹھنے والا ایک بڑا طوفان زمین سے ٹکرائے گا جس سے بڑی تباہی آئے گی۔ ناسا کے ہیلیو فزکس ڈویژن کے سربراہ رچرڈفشرنے بتایا کہ شمسی طوفان کے نتیجے میں انتہائی شدید نوعیت کی مقناطیسی توانائی خارج ہو گی جو زمین اور فضاءمیں کام کرنے والے تمام برقی آلات کو ناکارہ بنا دے گی ۔انہوں نے بتایا کہ اس دوران سورج کے درجہ حرارت میں 10ہزار ڈگری فارن ہائیٹ کا اضافہ ہو گا ۔رچرڈ کا کہنا ہے کہ اس طوفان کا آنا یقینی ہے جس کی شدت کی پیمائش ابھی درست طور پر نہیں کی جا سکتی ۔ امریکہ کی نیشنل اکیڈمی آف سائنس نے دو سال قبل خبردار کیا تھا کہ زمین پر آنے والا ایک شدید شمسی طوفان امریکہ کے تباہ کن سمندی طوفان کترینہ سے 20گنا زیادہ معاشی تباہی مچائے گا۔

Copyright © 2017. Powered by Paknewslive